×
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو

خدا کی سلام، رحمت اور برکتیں.

پیارے اراکین! آج فتوے حاصل کرنے کے قورم مکمل ہو چکا ہے.

کل، خدا تعجب، 6 بجے، نئے فتوے موصول ہوں گے.

آپ فاٹاوا سیکشن تلاش کرسکتے ہیں جو آپ جواب دینا چاہتے ہیں یا براہ راست رابطہ کریں

شیخ ڈاکٹر خالد الاسلام پر اس نمبر پر 00966505147004

10 بجے سے 1 بجے

خدا آپ کو برکت دیتا ہے

فتاوی جات / نکاح / مرد وعورت کا اپنی جنسی ساخت کو تبدیل کرنے اور ان سے شادی کا حکم

اس پیراگراف کا اشتراک کریں WhatsApp Messenger LinkedIn Facebook Twitter Pinterest AddThis

تاریخ شائع کریں:2016-09-06 08:19 AM | مناظر:4207
- Aa +

ایک مرد جنسی اعتبار سے عورت کی طرف تبدیل ہوگیا ہے اور اب وہ داخلی اورخارجی دونوں طرح سے عورت ہے، ڈاکٹروں نے اس میں مادۂ رحم بھی منتقل کردیا ہے اور اس کے سارے مردانہ اعضاء کو معطل کرکے اس میں زنانہ اعضاء رکھ دئیے ہیں ، تو سوال اب یہ ہے کہ کیا اس قسم کے مرد سے شادی کرنا جائز ہے ، اور بصورت دیگر اگر ایک عورت اسی طرح مرد میں تبدیل ہو جائے تو اس سے شادی کرنا جائز ہے؟ اور یہ بات ملحوظِ خاطر رہے کہ اس میں بچے پیدا کرنے کی بھی صلاحیت ہے اور جو بھی اسے دیکھتا ہے تو اسے بالکل پتہ نہیں چلتا کہ یہ پہلے مرد تھا

حکم الزواج من متحول جنسیا

جواب

جنسی اعتبار سے مرد کا عورت اور عورت کا مرد کی طرف منتقل ہونے کی دو حالتیں ہیں جن کے احکام مختلف ہیں:

پہلی حالت:  جب یہ تبدیلی جنسِ اصلی کی حقیقت کو ظاہر کرنے کے لئے ہو، چاہے وہ جنسِ اصلی مذکر ہو یا مؤنث ، اور چاہے اس پر مردانہ صفات ظاہر ہوں یا زنانہ صفات ،بہرحال ان ظاہری صفات کو زائل کرنے میں کوئی مضائقہ نہیں اور اس پر جنسِ اصلی کے احکام ہی جاری ہونگے، مثلاََ جب جنسِ اصلی مؤنث ہو اور اس پر مردانہ صفات کا ظہور ہوں تو ان صفات کو اللہ تعالیٰ کے فراہم کردہ بہتر اسباب سے زائل کرنا جائز ہے، اور اس صورت میں آدمی اپنے جنسِ اصلی ہی کی طرف لوٹے گا یعنی زنانہ پن کی طرف جیسا کہ مذکورہ بالا مثال میں ہے،  اور اس مرد کے لئے عورت کے تمام احکام ثابت ہونگے، لہٰذا اس صورت میں ایک مرد کے لئے اس سے شادی کرنا جائز ہے۔

دوسری حالت:  جب یہ بدلاؤ جنسِ اصلی کے ان اوصاف کو چھپانے کے لئے ہوں جن پر اللہ تعالیٰ نے انسان کوپیدا کیا ہے، اور جنسِ آخر کے ان اوصاف کو ظاہر کرنے کے لئے ہوں جو تبدیلی کی وجہ سے آئے ہوں، تو پھر یہ گناہِ کبیرہ میں سے ہے، اس لئے کہ یہ اللہ تعالیٰ کی تخلیق کو تبدیل کرنا ہے لہٰذا موجبِ سزا ہے۔

اور یہ ڈرامہ جو زنانہ اوصاف کوظاہر کرنے اور مردانہ اوصاف کو چھپانے یا اس کی الٹ صورت سے حاصل ہوا ہے کسی بھی شخص کی حقیقت کو تبدیل نہیں کرتا، لہٰذا مرد وعورت دونوں کے لئے انکے اصل جنس کے احکام ہی باقی رہیں گے، پس اگر کوئی مرد آپریشن وغیرہ سے عورت میں منتقل ہو جائے تو اس کے لئے مردانہ احکام ہی باقی رہیں گے اور کسی بھی دوسرے مرد کے لئے اس کے ساتھ شادی کرنا جائز نہیں ہے۔

واللہ الھادی الی سواء السبیل

آپ کا بھائی

أ ۔د  خالد المصلح


آپ چاہیں گے

ملاحظہ شدہ موضوعات

1.

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں