×
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو

خدا کی سلام، رحمت اور برکتیں.

پیارے اراکین! آج فتوے حاصل کرنے کے قورم مکمل ہو چکا ہے.

کل، خدا تعجب، 6 بجے، نئے فتوے موصول ہوں گے.

آپ فاٹاوا سیکشن تلاش کرسکتے ہیں جو آپ جواب دینا چاہتے ہیں یا براہ راست رابطہ کریں

شیخ ڈاکٹر خالد الاسلام پر اس نمبر پر 00966505147004

10 بجے سے 1 بجے

خدا آپ کو برکت دیتا ہے

فتاوی جات / روزه اور رمضان / کیا ایسے مریض کے لئے روزے کا توڑنا جائز ہے جس کے گردے فیل ہوگئےہو؟

اس پیراگراف کا اشتراک کریں WhatsApp Messenger LinkedIn Facebook Twitter Pinterest AddThis

تاریخ شائع کریں:2017-02-28 07:51 PM | مناظر:2195
- Aa +

کیا ایسے مریض کے لئے روزے کا توڑنا جائز ہے جس کے گردے فیل ہوگئےہو؟

هل يجوز الفطر لمريض مصاب بمرض الفشل الكلوي؟

جواب

حامداََ و مصلیاََ۔۔۔

اما بعد۔۔۔

اللہ تعالی کی توفیق سے جواب دیتے ہوے ہم عرض کرتے ہے کہ

اگر گردے کا واش اس کے اوراس طاقت کےدرمیان جس طاقت والے پراللہ نے روزوے فرض کئے ہیں رکاوٹ بنتا ہوں تو پھر یہ روزے اس پر واجب نہیں ہے ۔ باقی رہا یہ کہ کیا یہ مسلسل رہتا ہے، مطلب یہ کہ مسلسل وہ شخص طاقت نہیں رکھ سکتا یا صرف واش کےدنوں اسے روزہ رکھنے کی قدرت نہیں رہتی اوران دنوں کےعلاوہ میں وہ روزوں کی قدرت رکھتا ہو؟ تو اگر مسلسل طورپر طاقت نہ رکھتا ہو تو ہردن کےبدلے ایک مسکین کو کھانا کھلائے ،اللہ تعالیٰ کے اس قول کی وجہ سے (اوران لوگوں پر جو طاقت رکھتے ہوتو ان پر فدیہ ہےایک مسکین کے بقدر)(البقرۃ:۱۸۴) اوریہ قول جمہور علماء کا ہے ۔

اوراگر ان واش  والے ایام کے علاوہ میں روزہ رکھنے کی  طاقت رکھتا ہو تو وہاں ہم کہتے ہیں کہ جن دنوں میں طاقت نہ رکھتا ہو ان دنوں میں افطار کرے پھر بعد میں ان کی قضا کرے اللہ تعالیٰ کے اس قول کی وجہ سے (پس جوتم میں سے مریض ہو یا سفر میں تواس پر دوسرے دنوں کے روزے ہیں) (البقرۃ :۱۸۴)۔


آپ چاہیں گے

ملاحظہ شدہ موضوعات

1.

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں