×
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو

خدا کی سلام، رحمت اور برکتیں.

پیارے اراکین! آج فتوے حاصل کرنے کے قورم مکمل ہو چکا ہے.

کل، خدا تعجب، 6 بجے، نئے فتوے موصول ہوں گے.

آپ فاٹاوا سیکشن تلاش کرسکتے ہیں جو آپ جواب دینا چاہتے ہیں یا براہ راست رابطہ کریں

شیخ ڈاکٹر خالد الاسلام پر اس نمبر پر 00966505147004

10 بجے سے 1 بجے

خدا آپ کو برکت دیتا ہے

فتاوی جات / البيوع / سؤر کے گوشت اور شراب بیچنے کا حکم

اس پیراگراف کا اشتراک کریں WhatsApp Messenger LinkedIn Facebook Twitter Pinterest AddThis

تاریخ شائع کریں:2017-07-07 02:48 PM | مناظر:2294
- Aa +

مسلم ممالک میں سؤر کے گوشت اور شراب بیچنے کا کیا حکم ہے؟

حكم بيع الخمر ولحم الخنزير

جواب

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

سؤر کا گوشت اور شراب بیچنا جائز نہیں ہے، اس لئے کہ یہ دونوں کتاب وسنت اور اجماع کی رُو سے حرام ہیں، بخاری {۲۲۳۶} و مسلم {۱۸۵۱} میں یزید بن ابی حبیب اورعطاء بن ابی رباح کے طریق سے حضرت جابرؓ سے مروی ہے کہ انہوں نے اللہ کے نبی کو فتح مکہ کے سال یہ ارشاد فرماتے ہوئے سنا: ’’اللہ تعالیٰ نے شراب ، مردار ، سؤر اور بتوں کی بیع کو حرام قرار دے دیا ہے‘‘، اب اس حرمت کا حکم ہر مسلمان کو لازم ہے چاہے مسلم ممالک میں ہو یا غیر مسلم ممالک میں اور چاہے خریدار مسلمان ہو یا کافر۔ واللہ أعلم

آپ کا بھائی/

خالد المصلح

28/03/1425هـ


آپ چاہیں گے

ملاحظہ شدہ موضوعات

1.

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں