×
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو

خدا کی سلام، رحمت اور برکتیں.

پیارے اراکین! آج فتوے حاصل کرنے کے قورم مکمل ہو چکا ہے.

کل، خدا تعجب، 6 بجے، نئے فتوے موصول ہوں گے.

آپ فاٹاوا سیکشن تلاش کرسکتے ہیں جو آپ جواب دینا چاہتے ہیں یا براہ راست رابطہ کریں

شیخ ڈاکٹر خالد الاسلام پر اس نمبر پر 00966505147004

10 بجے سے 1 بجے

خدا آپ کو برکت دیتا ہے

فتاوی جات / ​​قربانی کے مسائل / قربانی کسی اور کے حوالے کرنا

اس پیراگراف کا اشتراک کریں WhatsApp Messenger LinkedIn Facebook Twitter Pinterest AddThis

مناظر:1340
- Aa +

سوال

اگر میں اپنی طرف سے کسی دوسرے شخص کو کسی غریب مسلمان ملک میں وکیل بنالوں کہ وہ میری طرف سے قربانی کرے اور اس کو اپنے غریب فقراء پر صدقہ کروں تو کیا مجھ پر اور میر ے وکیل کے لئے بالوں کا نہ کاٹنا واجب ہے ؟

التوكيل في الأضحية

جواب

حمد و ثناء کے بعد۔۔

 بتوفیقِ الٰہی آپ کے سوال کا جواب پیشِ خدمت ہے:

یہ حکم قربانی والے کے ساتھ متعلق ہے نہ کہ وکیل کے ساتھ ۔


ملاحظہ شدہ موضوعات

1.
×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں